وزیرعلیٰ سے مولانا عصمت اﷲایم پی اے کی زیر قیادت کوہستان وفد کی ملاقات

1-2-15-CM Photo-E-PK meets delegation of Kohistan led by Maulana AsmatUllah MPA at CM Secretariat Peshawar.
خیبرپختونخوا کے وزیر اعلیٰ پرویز خٹک نے کہا ہے کہ پی ٹی آئی کی اتحادی حکومت نے پہلا سال جامع قانون سازی اور پالیسیوں کی تشریح پر صرف کیا جو ملکی تاریخ کی ریکارڈ قانون سازی ہے جب ہم نے وزیراعلیٰ سمیت ہر خاص و عام کو قانون کا پابند اور قابل مواخذہ بنا دیا تو آئندہ کسی کی کرپشن کی مجال نہیں اور یہی اصل جمہوریت ہے افسوس کہ ماضی کے حکمران ایسا نہیں چاہتے تھے مگر اب جمہوریت کے تمام فوائد عوام کو ملیں گے اب تعمیر و ترقی کیلئے ٹھوس اقدامات کا وقت آ گیا ہے صوبے کے ہر ضلع، تحصیل، قصبے اور گاؤں میں متوازن تعمیر و ترقی کا نیا دور شروع ہو نے کو ہے جس میں ماضی کی طرح کسی فرد یا علاقے سے امتیازی سلوک ہوگا اور نہ ہی سیاسی انتقام لیا جائے گا بلکہ سب سے انصاف ہو گااب ترقیاتی فنڈز کا ضیاع نہیں بلکہ شفاف استعمال یقینی بنے گاوہ ضلع کوہستان کے وفد سے باتیں کر رہے تھے جس نے رکن صوبائی اسمبلی مولانا عصمت اﷲ کی زیر قیادت وزیر اعلیٰ سیکرٹریٹ پشاور میں اُن سے ملاقات کی اور انہیں علاقے کے بعض مسائل و مطالبات سے آگاہ کیا وفد میں پی ٹی آئی کے ضلعی جنرل سیکرٹری اور گزشتہ انتخابات میں پی کے 62 کوہستان سے پی ٹی آئی کے اُمیدوار صوبائی اسمبلی ڈاکٹر محمد حنیف، اسی حلقے سے اے این پی کے اُمیدوار محمد ریاض، سابقہ ضلعی چیئرمین زکوۃ کمیٹی ملک شیر باز، سابقہ ضلعی نائب ناظم مفتی عبید الرحمن اور بی ڈی ممبرملک مصطفی بھی شامل تھے جنہوں نے کرپشن کے خاتمے، تھانہ وپولیس کلچر کی اصلاح، تعلیمی و طبی اداروں میں عملے کی حاضری اور سہولیات کی بہتری سمیت پی ٹی آئی حکومت کے اقدامات اور اصلاحات کو اتفاق رائے سے سراہتے ہوئے اپنے مکمل تعاون کا یقین دلایا انہوں نے اطلاعات اور خدمات تک رسائی کے قوانین کا بھی خیرمقدم کیا اور عوامی مفاد کے یہ قوانین کوہستان کے تمام علاقوں پر لاگو کرنے کی استدعا کی انہوں نے شکوہ کیا کہ کوہستان کے بعض حصوں میں بندوبستی اور بعض میں پاٹا ریگولیشن کی وجہ سے تمام لوگ اسطرح کے بنیادی سہولیات سے برابر مستفید نہیں ہو پاتے جس پر وزیر اعلیٰ نے ان قوانین کی گورنر خیبرپختونخوا کی وساطت سے پاٹا کے تمام علاقوں تک توسیع کیلئے فوری اقدامات کی ہدایت کی تاکہ سب لوگ انکے ثمرات سے یکساں طور پر استفادہ کر سکیں کئی دیگر کوہستانی زعماء نے بھی وزیراعلیٰ سے ملاقات کے دوران اعتراف کیا کہ صوبے کی تاریخ میں پہلی بار میرٹ اور قانون کی عملداری قائم ہوئی ہے اور عوام کاسیاست و حکمران پر اعتماد بحال ہونے لگا ہے وزیراعلیٰ نے کہا کہ کوہستان کے بیشتر مسائل کا انہیں علم ہے عنقریب وہ دیگر اضلاع کی طرح یہاں کا دورہ بھی کرینگے انہوں نے کوہستانی زبان کو علاقائی زبان کی حیثیت سے سرکاری طور پر تسلیم کرنے، 16کلومیٹر پالس روڈ، داسو ڈیم سے ملحق دریا کے دونوں جانب بھاشا ڈیم تک شاہراہ اور متاثرہ دیہات میں علاقائی سڑکوں کی تعمیر اور اس مقصد کیلئے فنڈز میں اضافے، متاثرین کیلئے سمال انڈسٹریل ٹیکس فری زون بنانے، بلاسود کاروباری قرضے کی فراہمی، متاثرین کیلئے فنی تعلیمی مراکز کے قیام، متاثرین کیلئے ہاؤسنگ سوسائٹی کے قیام اور انکے بحالی پراجیکٹ سمیت متعدد مسائل کے ازالے کا یقین دلایا پرویز خٹک نے کہا کہ انکی صوبائی حکومت مئی میں بلدیاتی انتخابات کرانے جا رہی ہے اور اسکے ساتھ ہی ایسا بلدیاتی نظام لارہی ہے جس سے تمام انتظامی اور مالی اختیارات مقامی لوگوں کو منتقل ہونگے اور اسکی بدولت عوام اپنے تمام معاملات میں مقامی سطح پر مکمل بااختیارہو جائیں گے وہ اپنے بیشتر مسئلے خود ہی حل کر سکیں گے جبکہ صوبائی حکومت کے 30 فیصد اضافی وسائل اسکے علاوہ ہیں جسکے تحت ہر ضلع کو تیس تا چالیس کروڑ روپے کے مزید ترقیاتی فنڈز میسر ہونگے پی ٹی آئی کی اتحادی حکومت عملی طور پر ثابت کرنا چاہتی ہے کہ ہم اختیارات اپنے پاس رکھنے کی بجائے عوام منتقل کر رہے ہیں انہوں نے کہاکہ صوبائی حکومت کی شفاف پالیسی کی بدولت دور افتادہ اضلاع کی پسماندگی یقینی ختم ہو گی اسی طرح صوبائی حکومت کی شفاف معدنی اور ماحولیات پالیسیوں کی بدولت ان دشوار گزار کوہستانی علاقوں میں قیمتی معدنیات اور جنگلات کے وسائل کو سائنسی بنیادوں پر بروئے کار لاکر انکے فوائد مقامی لوگوں کو منتقل کئے جائینگے وفود نے انکے مسائل کے حل میں گہری دلچسپی لینے پر وزیراعلیٰ کا شکریہ ادا کرتے ہوئے صوبائی حکومت کی عوام دوست ترقیاتی پالیسیوں اور اقدامات کو سراہا اور اہل کوہستان کی طرف سے اس پر عمل درآمد میں بھر پور تعاون کا یقین دلایا۔

Tags: